Trending

سروس نہیں تو ٹیکس نہیں – قانونی طریقہ کار

عوامی بیداری مہم

(مالیگاؤں ڈرائیو – عوامی بیداری مہم)

شہر مالیگاؤں میں اکثر دیکھا جاتا ہے کہ کارپوریشن کی لاپرواہی سے جو کام نہیں ہوتے وہ عوام چندہ کر کے کرواتی ہے، آج ہم جمہوریت میں اپنے کام چندہ کر کے حل کرنے کا صحیح طریقہ دیکھتے ہیں۔ تاکہ کام بھی ہو اور احتجاج بھی بلند ہو، نیز ہم جمہوری طریق کار پر ظلم کے خلاف آواز بھی بلند کر سکیں۔ جمہوریت میں چندہ کر کے اپنا کام نکال لینے کا درست طریقہ کچھ یوں ہے کہ

 آپ کے علاقے کا جو کام رکا ہوا ہے (یا ایک ہی کام بار بار کرایا جاتا ہے اور پیسے کھائے جاتے ہیں) اس کی مکمل تفصیل ایک لیٹر میں لکھیں، اور کچھ تصاویر نکال کر اس لیٹر کے ساتھ لگا دیں۔

 اس لیٹر کے مضمون سے متعلق علاقے / گلی / محلے والوں کو متفق کریں اور سب کی دستخط بھی لیں۔ جس جس نے دستخظ کی ہیں وہ پیچھے نہ ہٹے اتنا تیار ہونا چاہئے۔

 اس لیٹر کے مضمون میں مرکزی بات یہ ہونی چاہئے کہ ہمارا فلاں مسئلہ اتنے اتنے وقت سے حل نہیں ہو رہا ہے۔ ہم برابر ٹیکس بھرتے ہیں، اب اس مسئلہ کے حل ہونے تک علاقے والے کسی بھی طرح کا سرکاری ٹیکس نہیں بھریں گے بلکہ اس ٹیکس کی رقم کا ہم خود ہی استعمال کر اپنے مسائل حل کر لیں گے کیونکہ آپ سرکاری لوگ ہم سے پیسہ لے کر ہمارا مسئلہ حل نہیں کر پا رہے ہو۔ ظاہر ہے جب پیسے دیں اور سروس نہ ملتی ہو تو متبادل ذرائع تلاش کرنا نقصان اٹھانے سے بہتر ہے۔

 اب اس طرح کے مضمون والے لیٹر کو میئر، کمشنر، ضلع کلکٹر، وزیر اعلی، گورنر، وزیر اعظم اور صدر جمہوریہ تک کو پوسٹ کے ذریعہ بھیج دیں۔

اب اپنے علاقوں میں چندہ کریں اور ٹیکس نہ بھریں پھر چندہ کرتے ہوئے ویڈیوز بنائیں اور تمام نیوز چینلوں کو بھیج دیں۔

 ممکن ہو تو اس چندہ کی اور کام کروانے کی ویڈیو بھی بنائیں اور نیوز چینلوں کے ساتھ ساتھ اوپر دیئے ہوئے تمام عہدہ داروں کو بھیج دیں۔

 جب آپ سے ٹیکس کا مطالبہ ہو تو نہ بھریں اور ثبوت کے طور پر لیٹر و ویڈیوز پیش کریں۔

سہولت نہیں تو ٹیکس بھی نہیں۔ پھر دیکھتے ہیں سرکار کب تک بناء سہولیات کے کام گاروں کی تنخواہ کا انتظام کرتی ہے۔

مگر دھیان رہے کہ یہ عوامی احتجاج کثرت عوام سے ہی کامیاب ہوگا۔ اس لئے علاقے کے زیادہ سے زیادہ لوگوں کا ساتھ کھڑا ہونا کامیابی کی ضمانت ہوگا۔
جس کیلئے عوام کو خود کھرا ہونا ہوگا۔ اس لئے سب مل کر کھڑے ہونے کی ہمت رکھتے ہوں تو جمہوری قانونی طریقہ سے قدم اٹھائیں ورنہ پریشانی جھیلتے رہیں اور ظلم سہتے رہیں۔ ٹیکس بھی برابر بھریں اور چندہ بھی کرتے رہیں، دونوں طرف پیسہ اور وقت برباد کرنا ہے یا ٹیکس نہ بھر کر چندہ سے کام کروانا اور احتجاج بھی بلند کرنا ہے۔ اب یہ فیصلہ ہمارا ہے ظالم نظام کے خلاف کھڑے ہونا ہے یا ظلم سہتے رہنا ہے؟

عوامی بیداری مہم

Admin Panel

MALEGAON DRIVE

Related Articles

Back to top button
Don`t copy text!
Close